ہرشمع بْجھی رفتہ رفتہ، ہر خواب لْٹا دھیرے دھیرے۔۔۔۔ شیشہ نہ سہی، پتھر بھی نہ  تھا،  دِل ٹوٹ گیا دھیرے دھیرے

  دِل کیسے جلا، کِس وقت جلا،  ہم کو بھی پتہ  آخِر میں چلا

پھیلا ہے دْھواں چْپکے   چٌپکے،  سْلگی ہے چِتا  دھیرے دھیرے

اِحساس ہوا بربادی کا، جب سارے گھر میں دْھول اْڑی

آئی ہے ہمارے آنگن میں، پت جھڑ کی ہوا دھیرے دھیرے

برسوں میں مراسم بنتے ہیں، لمحوں میں بھلا کیا ٹوٹیں گے

تو مجھ سے بچھڑنا چاہے تو، دیوار اْٹھا دھیرے دھیرے

وہ ہاتھ پرائے ہو بھی گئے،  اب  درد کا رشتہ ہے قیصر

آتی ہے تیری تنہائی میں خوشبوِ حنا دھیرے دھیرے

 

[Andaz e Bayan – 1986]

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s