وْہی حسیں ہے حقیقت زوال ہے جِس کی۔۔۔

ہم شوقِ جنوں کے سَودائی

By Imtnan Qazi 

 

ہم شوقِ جنوں کے سَودائی
ہم غرض و جفا کے ہرجائی
اِک ردِّ انا ملحوظ ہمیں
ہو محفل یا کہ تنہائی
ہم کاسہ گرانِ نفرت بھی
ہے پیش جہانِ اُلفت بھی
دائم ہے ہم سے منزل بھی
ہم راہ روانِ ہجرت بھی
ہم رنج و الم کے سوداگر
ہم رُوح و فکر کے بخیہ گر
ہم پیشہ ورانِ حسرت بھی
ہم بیچیں خواب کی ہر صورت
راہوں کا فسُوں بھی ہم سے ہے
منزل کا سکُوں بھی ہم سے ہے
ہم ہی سے تعلق پھاہوں کا
زخموں کا درُوں بھی ہم سے ہے
ہم بیم و رجا کے پُتلی گر
ہم رنگ و وفا کے جادوگر
ہر خوف کی چادر ہم سے ہے
ہر ہوّا ہم… ہم بازی گر!!
تم جانو تمری راہ ہو کیا
ہے ہم کو کانچ کا چُننا بس
جانو جو ادنیٰ جان سکو
ہے ہم کو چھان سا چَھننا بس
ہم اہلِ قلم کی دنیا بھی
احساس کا جاری جھرنا بس
یوں ہمری یہ پہچان کرو
ہے ہم کو حال کا لکھنا بس!!

 

http://www.imtnaniyat.wordpress.com

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s