Umair’s Tagline – 239

گھر میں گلدان سجائے ہیں تیری آمد پر

اور اک پھول بہانے سے الگ رکھا ھے

 

🙂

 

جو چاہے ہے ،آپ کرے ہے … ہم کو عبث بدنام کِیا

یہ مَیں بھی کیا ہوں

کہ جیسے کوئی

تھرکتے دھاگے کے اس سرے سے

لپٹ کے بیٹھا

ہلائے جانے کا منتظر ہو

 یہ کیا ہو تم بھی

کہ جیسے کوئی

تھرکتے دھاگوں پہ پتلیوں کو نچا رہا ہو

Dialogue – 164 ( کدِی تے ہسّ بول وے )

“How are you Ji…”

“Theek…. Tum..?..”

“Mein bhi theek.. Karam Allah ka…”

“Hmmm…”

“Aaj chup chup ho…. Khair..!..”

“Ji…”

“Yaar banda baat cheet kar ley to na calories kharch hoti hein, na aqal… 😛 ….”

“Ahan…..”

“Matlab, chup ka roza…”

“.. 🙂 ….”

“Come on… Batao kiya hua..! Ab baat bhi nahin karni… Alfaaz khatam ho gaye kiya!?… Mujh se koi qasroor hogiya..!.. Jo kay hota hi rehta hai… Na ho, tab tumhaari khamoshi banti hai…”

“Aik to tum bhi na… Idhar udhar kay sawaal……Ulti seedhay baat kar kay baat shuru kartay ho….!”

“Tau… Iss mein kiya..? “

“Phir usi baat cheet ka ‘dialogue’ bana kay post kar detay ho….”

Umair’s Tagline – 238

خواہش کے  مزاروں  پہ  دئیے روز جلا  کر

ٹوٹے ہوئے خوابوں سے شرارت نہیں کرتے

Classics – 67

رات تو وقت کی پابند ہے ، ڈھل جائے گی

!… دیکھنا یہ ہے چراغوں کا سفر کِتنا ہے

One liners – 97

الفاظ کی نسبت خاموشی زیادہ وضاحت رکھتی ہےاور خاموشی میں کبھی منافقت نہیں ہوتی 

After the Promise – 1987

Film.jpg

Inspired by a true story, this film is about an itinerant Depression- era carpenter who is declared an unfit parent because of his financial situation when his wife dies. Fighting against the legal system of the time, he struggles for eight years to regain custody of his four children.

Umair’s Tagline – 237

تو کہانی کی ہی پردے میں بھلی لگتی ہے

زندگی …. تیری حقیقت نہیں دیکھی جاتی

قسمتِ نوعِ بشر تبدیل ہوتی ہے یہاں

http://www.akhuwat.org.pk/akhuwat-university/

(Not so) Random Thoughts – 100

A special post….

دو الفاظ

سنو مایوس کیوں ہو تم؟

“نصیبِ دشمناں” اب تو “وفائے دوستاں” ٹھہرا

کہ دشمن تو چلو ہر پل کے دردِ سر کا باعث تھے

مگر اُن دوستوں کا کیا

کہ جن کی دوستی بس لفظ سے آگے نہیں بڑھتی

کہ جن کی زندگی اک گھاؤ ہے اس بے ربط دل کا

سنو

کیا اپنے رب کو بھی ، کسی ایسے ہی رشتے کے مماثل تم سمجھتے ہو

سنوکیا تم ‘عطائے رب’ کو بھی بس دو عدد الفاظ کی صورت ہی دیتے ہو

وہ جن کے بیچ  ساری کہکشائیں ہیں

ہماری آتمائیں ہیں

ہماری اولیں صبحیں

ہماری آخری شامیں۔

سنو

کیا رب کی قدرت اور عطا تم پر

کسی مجبور لمحے کا سہارا ہیں

کہ یا پھر پختہ تر ایماں ، یقیں کا استعارہ ہیں

سنو

یہ معجزے ہوتے ہی تب ہیں

جب ہمارا دل یقیں سے سانس لیتا ہے

اخیرِ شب میں جو آنسو شرمساری سے بنتے ہیں

،وفاداری سے گرتے ہیں

،سپرداری سے آنکھوں کی

،وہ موتی اور گہر ہوتے ہیں اس بے خانماں پن کے

،کہ جس کی ہر ادا محبوب ہے اس عرش والے کو

،کہ جس کی عظمت و توحید ہر مخلوق کا محور

کہ جس کی تسبیح و تقدیس ہر مخلوق کا شیوہ۔

سنو

وہ رب جھکے کندھوں

خمیدہ گردنوں

ٹوٹے ہوئے سجدوں

شکستہ، پر ، نمیدہ نیتوں

اور ڈولتی پیشانیوں سےپیار کرتا ہے

حیا صورت ، وہ ان سب نامکمل ساعتوں ، ناکامیوں کو

تم سے زیادہ اہم بھی بننے نہیں دیتا۔

سنو

!وہ رب تمہارے لوٹ آنے کے ارادوں اور فریادوں کو

اپنی ہر توقع سے بہت زیادہ ، بہت ہی خاص حد تک

 پل بہ پل

لمحوں کی صورت گنتا رہتا ہے

 کہ شاید اب

کہ شاید اب

کہ شاید جب بھی لوٹ آؤ۔

وہ سارے آسمانوں اور زمیں کا رب

صرف ‘لا تقنطو’ کے اک ارادے پر

تمہیں وسعت بخشتا ہے

وہ وسعت جو محبت کی حدوں سے ماورا ہر سمت میں تم کو

،سہارا دے

وہ وسعت جو تمہں ہر پل

تمہارے رب کی رحمت کے حصارِ خاص میں رکھے

 

عطائے رب’ کے دو الفاظ میں رکھے۔’

 

Umair’s Tagline – 235

 میری آنکھوں کو اب لہُو بخشو

کھارے پانی سے تھک گئی ہیں یہ

 

Umair’s Tagline – 234

 ﺷﺎﯾﺪ ﻣِﻼ ﻧﮩﯿﮟ ﻭﮦ ﺩَﺭﯾﭽﮧ ﮐُﻬﻼ ﮨﻮﺍ

ﺟَﻬﻮﻧﮑﺎ ﮨﻮﺍ ﮐﺎ ﺁﺝ ﺑﮍﺍ ﺑَﺪﺣﻮﺍﺱ ﮨﮯ

Memories – 32

ہم سے روٹھا بھی گیا ہم کو منایا بھی گیا

پھر سبھی نقش تعلّق کے مٹائے بھی گئے

عِشق دِیاں تفسیراں تینوں کِی دسّاں … کنداں نال وی گلّاں کرنیاں پیندیاں نیں

O’ dear

This fall is rebirth

This scar is revival

This pain is rejoice

Only if you are mine…

 

[Samana Syed]

Oath – 6 [The Olympic Oaths]

“In the name of all competitors, I promise that we shall take part in these Olympic Games, respecting and abiding by the rules that govern them, committing ourselves to a sport without doping and without drugs, in the true spirit of sportsmanship, for the glory of sport and the honor of our teams.”

اِس خاک کے پُتلےکا …. ہر رنگ نِرالا ہے

  • Viewpoint is the deciding factor as to how you experience life. [Dick Sutphen]
  • A man is literally what he thinks. [James Allen]
  • Each one sees what he carries in his heart. [Johann Wolfgang Von Goethe]
  • Miracles start to happen when you give as much energy to your dreams as you do to your fears. [Richard Wilkins]
  • The soul contains the event that shall befall it, for the event is only the actualization of its thoughts, and what we pray to ourselves for is always granted. [Ralph Waldo Emerson]
  • We become what we think about. [Earl Nightingale]
  • We choose our joys and sorrows long before we experience them. [Khalil Gibran]
  • Genius is no more than childhood recaptured at will. [Charles Baudelaire]

One liners – 96

When we dream alone it remains only a dream; when we dream together, it is not just a dream…..it is the beginning of reality.

[Dom Helder Camara]

Umair’s Tagline – 233

 سامنا آج ____ اَنا سے ھو گا

بات رکھنی ھےتو سَر دے دینا

Seems’ Inspirations – 1

This sub-category draws its posts, spirit and inspiration from Seema Aftab (aka Seems) who is a valuable member of our community.

The blog, collections and posts by Seems are our guiding light and true compass.

Umair’s Tagline – 232

  ‏اک چراغ اپنے دریچے پہ جلاتا ہے کوئی 

اور نیند آتی نہیں‌ مجھ کو سحر ہونے تک

“If you do not change direction, you may end up where you are heading.”

ea883309ef57e52449c7e84656f6717e1683071744.jpg

Soul-Search 73

 باہر ہیں حدِ فہم سے رندوں کے مقامات

کیا تجھ کو خبر کون کہاں جھوم رہا ہے

Umair’s Tagline – 231

 خاک کو چوٹ اگر خاک سے لگ سکتی ہے

منہ پہ دریا کے بھی آنسو کوئی مارا جائے

Umair’s Tagline – 230

 لکھی تقدیر میری بے اعراب

اور نقطے بھی چھوڑ کر لکھی

 

اِس وطن کا ہر ذرہ آفتاب تُم سے ہے

fd649e99c8cb713bbcdb5f096a7aa228-1578326516.jpgd84eb4668084d9a85f3dd01f83d2a7221814277281.jpg4aaa95f080b58fbf297a7f11105048d918940739.jpg94227a5760b2a257ce89d3cb53d077d1286206390.jpgac23d197fc05988ddb85c4258262a4f6-873787023.jpg

Hadees e Qudsi – 15

On the authority of Abu Harayrah (may Allah be pleased with him), who said that the Prophet (PBUH) said: Allah the Almighty said:

I am as My servant thinks I am (1). I am with him when he makes mention of Me. If he makes mention of Me to himself, I make mention of him to Myself; and if he makes mention of Me in an assembly, I make mention of him in an assemble better than it. And if he draws near to Me an arm’s length, I draw near to him a fathom’s length. And if he comes to Me walking, I go to him at speed.

 

(1) Another possible rendering of the Arabic is: “I am as My servant expects Me to be”. The meaning is that forgiveness and acceptance of repentance by the Almighty is subject to His servant truly believing that He is forgiving and merciful. However, not to accompany such belief with right action would be to mock the Almighty.

 

It was related by al-Buhkari (also by Muslim, at-Tirmidhi and Ibn-Majah).

Prophet Muhammad’s ﷺ letter to Haudha bin ‘Ali, Governor of Yamama

“In the Name of Allah, the Most Beneficent, the Most Merciful.

From Muhammad, Messenger of Allah to Haudha bin ‘Ali.
Peace be upon him who follows true guidance. Be informed that my religion shall prevail everywhere. You should accept Islam, and whatever under your command shall remain yours.”

 

The envoy chosen was Sulait bin ‘Amr Al-‘Amiri, who after communicating his message, carried back the following reply to the Prophet ﷺ, “The Faith, to which you invite me, is very good. I am a famous orator and poet, the Arabs highly respect me and I am of account among them. If you include me in your government, I am prepared to follow you. ”

The governor then bestowed a reward on Sulait and presented him with clothes made of Hajr fabric. Of course, he put all those presents in the trust of the Prophet ﷺ.

The Prophet ﷺ did not accept Haudha’s demand. He usually turned down such peremptory tone, and would say that the whole matter was in the Hand of Allah, Who gave His land to whoever He desired. Gabriel later came with the Revelation that Haudha had died.

The Prophet ﷺ , in the context of his comment on this news, said: ” Yamama is bound to give rise to a liar who will arrogate Prophethood to himself but he will subsequently be killed.”

In reply to a question relating to the identity of the killer, the Prophet ﷺ said “It is one of you, followers of Islam.”

[Za’d Al-Ma’ad 3/63]

Expressions – 62

If I keep from meddling with people, they take care of themselves,

If I keep from commanding people, they behave themselves,

If I keep from preaching at people, they improve themselves,

If I keep from imposing on people, they become themselves.”

[Attributed to Lao-Tsu]

One liners – 95

Personal happiness is so important, most choose to let someone else take care of it.

(Terry Rossio)

Umair’s Tagline – 229

 آپ کا سنگِ در نہیں چمکا

ہم جبینیں سیاہ کر بیٹھے

Classics – 66 (ہر خواب شکستہ ہونے تک زنجیرِ سحر میں رہتا ہے)

اس وقت تو یوں لگتا ہے اب کچھ بھی نہیں ہے
مہتاب نہ سورج نہ اندھیرا نہ سویرا
آنکھوں کے دریچوں میں کسی حسن کی جھلکن
اور دل کی پناہوں میں کسی درد کا ڈیرا
ممکن ہے کوئی وہم ہو ممکن ہے سنا ہو
گلیوں میں کسی چاپ کا اک آخری پھیرا
شاخوں میں خیالوں کے گھنے پیڑ کی شائید
اب آ کے کرے گا نہ کوئی خواب بسیرا
اک بیر نہ اک مہر نہ اک ربط نہ رشتہ
تیرا کوئی اپنا نہ پرایا کوئی میرا
مانا کہ یہ سنسان گھڑی سخت بڑی ہے
لیکن میرے دل یہ تو فقط ایک گھڑی ہے
ھمت کرو جینے کو ابھی عمر پڑی ہے

 

Facts – 67

 گمان سے دھیان تک ہر شے الله کے حکم سے اثر کرتی اور اثر رکھتی ہے اسی لئے ہم سے آنکھ کی جنبش اور نیت کی خامی تک کا سوال کیا جائیگا۔

 

Umair’s Tagline – 228

 بولے تو سہی جُھوٹ ہی بولے وہ بلا سے

ظالم کا لب و لہجہ ……. دلآویز بہت ہے

 

ہوش والوں کو خبر کیا بے خودی کیا چیز ہے

 میاں محمد بخش کی باتیں

خسروجی کے پریم کی ٹھنڈک

خواجہ فرید کے سوز کا مرھم

اور کبیر کے دوھوں کا رس

سب کچھ انت اخیر سا کیوں ہے

آخرعشق فقیر سا کیوں ہے؟