ہم مُحبت کشِید لوگوں پر ، عِشق صدمے بحال رکهتا ہے

حسابِ عمر کا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اتنا سا گوشوارا ہے
تمہیں نکال کے دیکھا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ تو سب خسارا ہے

کسی چراغ میں ہم ہیں ……….. کسی کنول میں تم
کہیں جمال ہمارا ……………………… کہیں تمہارا ہے

وہ کیا وصال کا لمحہ تھا ………. جس کے نشے میں
تمام عمر کی فرقت ……………………. ہمیں گوارا ہے

ہر اک صدا ………………. جو ہمیں بازگشت لگتی ہے
نجانے ہم ہیں دوبارہ ……………….. کہ یہ دوبارہ ہے

وہ منکشف مری آنکھوں میں ہو …… کہ جلوے میں
ہر ایک حُسن ……………….. کسی حُسن کا اشارہ ہے

عجب اصول ہیں ……………….. اس کاروبارِ دُنیا کے
کسی کا قرض ………………….. کسی اور نے اُتارا ہے

کہیں پہ ہے کوئی خُوشبو …….. کہ جس کے ہونے کا
تمام عالمِ موجود …………………………. استعارا ہے

نجانے کب تھا! ……….. کہاں تھا …. مگر یہ لگتا ہے
یہ وقت ……………. پہلے بھی ہم نے کبھی گزارا ہے

یہ دو کنارے تو دریا کے ہو گئے ……………… ہم تم!
مگر وہ کون ہے ………………….. جو تیسرا کنارا ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

امجد اسلام امجد

Advertisements

One thought on “ہم مُحبت کشِید لوگوں پر ، عِشق صدمے بحال رکهتا ہے

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out /  Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out /  Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out /  Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out /  Change )

Connecting to %s