طلع البدر علينا من ثنيات الوداع … وجب الشكر علينا ما دعى لله داع

qasida new.jpg

 

 

Recommended Read: “Nanhay Huzoor ﷺ ” by Ihsaan B.A

http://www.libertybooks.com/index.php?route=product/product&product_id=34226

کچھ اور مجھے بخش محمد ﷺ کی غلامی۔۔ کچھ اور میری قدر بڑھا دے مِرے مولا۔۔

چہرہ ہے کہ انوارِ دو عالم کا صحیفہ
آنکھیں ہیں کہ بحرین تقدس کے نگین ہیں
ماتھا ہے کہ وحدت کی تجلی کا ورق ہے
عارِض ہیں کہ “والفجر” کی آیت کے اَمیں ہیں
گیسُو ہیں کہ “وَاللَّیل” کے بکھرے ہوئے سائے
ابرو ہیں کہ قوسینِ شبِ قدر کھُلے ہیں
گردن ہے کہ بَر فرقِ زمیں اَوجِ ثُریا
لَب صورتِ یاقوت شعاعوں میں دُھلے ہیں
قَد ہے کہ نبوت کے خدوخال کا معیار
بازو ہیں کہ توحید کی عظمت کے عَلم ہیں
سینہ ہے کہ رمزِ دل ہستی کا خزینہ
پلکیں ہیں کہ الفاظِ رُخِ لوح و قلم ہیں
باتیں ہیں کہ طُوبٰی کی چٹکتی ہوئی کلیاں
لہجہ ہے کہ یزداں کی زباں بول رہی ہے
خطبے ہیں کہ ساون کے اُمنڈتے ہوئے دریا
قِرأت ہے کہ اسرارِ جہاں کھول رہی ہے
یہ دانت ، یہ شیرازہ شبنم کے تراشے
یاقوت کی وادی میں دمکتے ہوئے ہیرے
رفتار میں افلاک کی گردش کا تصور
کردار میں شامل بنی ہاشم کی اَنا ہے
گفتار میں قرآں کی صداقت کا تیقُّن
معیار میں گردُوں کی بلندی کفِ پا ہے
وہ فکر کہ خود عقلِ بشر سَر بگریباں
وہ فقر کہ ٹھوکر میں ہے دنیا کی بلندی
وہ شُکر کہ خالق بھی ترے شُکر کا ممنون
وہ حُسن کہ یوسف(ع) بھی کرے آئینہ بندی
وہ علم کہ قرآں تِری عترت کا قصیدہ
وہ حِلم کہ دشمن کو بھی اُمیدِ کرم ہے
وہ صبر کہ شَبِّیر تِری شاخِ ثمردار
وہ ضبط کہ جس ضبط میں عرفانِ اُمم ہے
“اورنگِ سلیماں” تری نعلین کا خاکہ
“اِعجازِ مسیحا” تری بکھری ہوئی خوشبو
“حُسنِ یدِ بیضا” تری دہلیز کی خیرات
کونین کی سَج دھج تِری آرائشِ گیسُو
سَرچشمۂ کوثر ترے سینے کا پسینہ
سایہ تری دیوار کا معیارِ اِرَم ہے
ذرے تِری گلیوں کے مہ و انجمِ افلاک
“سُورج” ترے رہوار کا اک نقشِ قدم ہے
دنیا کے سلاطیں ترے جارُوب کشوں میں
عالم کے سکندر تِری چوکھٹ کے بھکاری
گردُوں کی بلندی ، تری پاپوش کی پستی
جبریل کے شہپر ترے بچوں کی سواری
دھرتی کے ذوِی العدل ، تِرے حاشیہ بردار
فردوس کی حوریں ، تِری بیٹی کی کنیزیں
کوثر ہو ، گلستانِ ارم ہو کہ وہ طُوبٰی
لگتی ہیں ترے شہر کی بکھری ہوئی چیزیں
ظاہر ہو تو ہر برگِ گُلِ تَر تِری خوشبو
غائب ہو تو دنیا کو سراپا نہیں ملتا
وہ اِسم کہ جس اِسم کو لب چوم لیں ہر بار
وہ جسم کہ سُورج کو بھی سایہ نہیں ملتا
احساس کے شعلوں میں پگھلتا ہوا سورج
انفاس کی شبنم میں ٹھٹھرتی ہوئی خوشبو
اِلہام کی بارش میں یہ بھیگے ہوئے الفاظ
اندازِ نگارش میں یہ حُسن رمِ آہُو
حیدر تری ہیبت ہے تو حَسنین ترا حُسن
اصحاب وفادار تو نائب تِرے معصوم
سلمٰی تری عصمت ہے ، خدیجہ تری توقیر
زہرا تری قسمت ہے تو زینب ترا مقسوم
کس رنگ سے ترتیب تجھے دیجیے مولا ؟
تنویر ، کہ تصویر ، تصور ، کہ مصور ؟
کس نام سے امداد طلب کیجیے تجھ سے
یٰسین ، کہ طہٰ ، کہ مُزمِّل ، کہ مدثر ؟
پیدا تری خاطر ہوئے اطرافِ دو عالم
کونین کی وُسعت کا فَسوں تیرے لیے ہے
ہر بحر کی موجوں میں تلاطم تِری خاطر
ہر جھیل کے سینے میں سَکوں تیرے لیے ہے
ہر پھول کی خوشبو تِرے دامن سے ہے منسوب
ہر خار میں چاہت کی کھٹک تیرے لیے ہے
ہر دشت و بیاباں کی خموشی میں تِرا راز
ہر شاخ میں زلفوں سی لٹک تیرے لیے ہے
دِن تیری صباحت ہے ، تو شب تیری علامت
گُل تیرا تبسم ہے ، ستارے ترے آنسو
آغازِ بہاراں تری انگڑائی کی تصویر
دِلداریِ باراں ترے بھیگے ہوئے گیسُو
کہسار کے جھرنے ترے ماتھے کی شعاعیں
یہ قوسِ قزح ، عارضِ رنگیں کی شکن ہے
یہ “کاہکشاں” دُھول ہے نقشِ کفِ پا کی
ثقلین ترا صدقۂ انوارِ بدن ہے
ہر شہر کی رونق ترے رستے کی جمی دھول
ہر بَن کی اُداسی تری آہٹ کی تھکن ہے
جنگل کی فضا تیری متانت کی علامت
بستی کی پھبن تیرے تَبسُّم کی کرن ہے
میداں ترے بُو ذر کی حکومت کے مضافات
کہسار ترے قنبر و سلماں کے بسیرے
صحرا ترے حبشی کی محبت کے مُصلّے
گلزار ترے میثم و مِقداد کے ڈیرے

صلی اللہ علیہ وسلم

 

 

(From Loh e Adraak – by Mohsin Naqvi)

[Received in a Whatsapp Msg…

This is the most beautiful thing to read, feel and be blessed with….]

Imam Bukhari’s (toughest) criteria for preserving Hadees-e-Rasool ﷺ

A man who developed a yearning to learn Hadees went to the great Imam al-Bukhari (May Allah (SWT) have mercy on him) and explained to him his intentions. Imam al-Bukhari thus advised:

“Son, before you set out to pursue any field, make sure you are well-grounded with its prerequisites and demands. And remember that a person cannot become a perfect scholar in the science of Hadees [muhaddis] until and unless he writes four things with four other things, which are indispensable as four things, which resemble four other things. (He must write these things) in four times, with four conditions, in four places, upon four things, from four types of people, and for four objectives. All of these four-angled things can only be achieved with four things coupled with another four things. Once all of these things have been achieved, four things will become insignificant for him and he will be tried with four other things. If he exercises patience in these four trials, Allah (SWT) will honour will with four things in this world and award him four things in the hereafter.”
He then proceeded to explain these four-angled things:

“The four things he has to write write are:

(1) the statements and commands of Allah’s Messenger Sall-Allahu alayhi wa sallam.

(2) the saying of the Companions RA and their relative ranks

(3) the sayings of the Followers RA and their ranks (i.e. who among them are reliable and who are not), and

(4) the conditions of all the narrators who narrate hadiths.

These (four pieces of information) must be written together with the following four things:

(1) the actual names of the narrators

(2) their appelations or titles (kuna)

(3) their places of residence, and

(4) their dates of birth and death (to determine whether the narrator actually met the people he has narrated from).

(These are indispensable to him) just (as four things are necessary with four other things:)

(1) as praises [tahmid] of Allah (SWT) (are necessary) with the khutba,

(2) as salutations [salawat], (are necessary) with mention of the name of Allah’s MessengerSall-Allahu alayhi wa sallam.

(3) as (the recitation of) bismillah (is necessary) with a sura (of the Qur’an), and

(4) as the takbir (is necessary) with the salat.

These resemble four other things (which are names of four categories of hadith)

(1) the musnadat [narrations traceable to the MessengerSall-Allahu alayhi wa sallam]

(2) the mursalat [narrations transmitted by a Follower from the MessengerSall-Allahu alayhi wa sallam directly without a Companion in between,

(3) the mawqufat [narrations from traceable only to a Companion],

(4) the maqtu’at [narrations traceable only to a Follower].

(These things must all be written ) in four times:

(1) in his childhood

(2) in his age of discernment (i.e. close to maturity),

(3) in his youth, and

(4) in his old age.

(In other words, he must continue acquiring hadiths at all times throughout every stage of his life. They must be written) under four conditions:

(1) while his is occupied,

(2) while he is free,

(3) in his poverty, and

(4) in his affluence.

(In other words, he must diligently pursue the knowledge of these things no matter what his circumstances maybe. This is done) at four places:

(1) in moutainous terrain,

(2) on the seas,

(3) in cities, and

(4) and in rural areas.

(In other words, he must endeavour to acquire the science from the right teacher, no matter where that teacher is located. He writes what he has acquired) Upon four things:

(1) upon stones,

(2) upon shells,

(3) upon skins, and

(4) and upon bones.

(In other words, even when he does not find paper he will continue recording it somewhere) until he finds the paper upon which to preserve. (He acquires it from four different types of people:)

(1) from his seniors,

(2) from his juniors,

(3) from his counterparts, and

(4) from the books of his father, provided he has firm conviction that these are his fathers books.

(In other words, he endeavours to acquire this science in everway possible without feeling ashamed to obtain it even from his juniors. He has four objectives for doing all these things:)

(1) to acquire (this science) solely for the pleasure of Allah (SWT),

(2) to practice upon the Hadiths which conform to the verse of the Holy Qur’an,

(3) to propogate (the science) to those who seek it, and

(4) to write it out so that it can be a source of guidance to those who will come after him.

Thereafter, the aforementioned four things cannot be acquired (unless he has first acquired) four other things part of human acquisition:

(1) the knowledge of how to read and write,

(2) lexicography and vocabulary,

(3) morphology, and

(4) syntax,

together with four other things that are not of human acquisition, but are bestowed by Allah (SWT):

(1) sound health,

(2) ability,

(3) an ardent desire for learning, and

(4) a retentive memory.

Once all of the aforementioned four-angles things are attained by him, then four things will become insignificant before him:

(1) his family,

(2) his children,

(3) his wealth, and

(4) his native land.

He will then be afflicted with four things:

(1) his enemies will rejoice at his distress,

(2) his friends will reproach him,

(3) the ignorant will taunt him, and

(4) the scholars [Ulama] will be jealous of him.

Once he exercises patience in these calamities, Allah (SWT) will honour him with four things in this world:

(1) the honour of contentment [qana’a]

(2) conviction coupled with awe and dignity,

(3) the pleasure of sacred knowledge [ilm], and

(4) eternal life.

(On top of that,) Allah (SWT) will honour him with four things in the hereafter:

(1) the honour of intercession on behalf of whomever he pleases,

(2) the shade of the throne of Allah (SWT) on the day there will be no shade available except of the shade of His throne,

(3) the privilege to provide water to whomsoever he pleases from the pool of Muhammad SAW [al-Kawthar], and

(4) close proximity with the Prophets [Ambiya’] in the Highest of the High Places [a’la ‘illiyin].

So now, my son, I have told you whatever I have heard from teachers [masha’ikh]. Now you have the choice to either pursue this field or to abstain from it.””

 

Links:
1. http://www.issmstudents.wordpress.com/2010/04/18/imam-bukharis-criteria-of-preserving-hadith/
2. http://www.wikiislam.net/wiki/Sahih

Farewell Sermon by Holy Prophet (PBUH)…

Each word is a guidelines for us….. Seems, it was written for today’s time…

“Verily your blood, your property are as sacred and inviolable as the sacredness of this day of yours, in this month of yours, in this town of yours. Behold! Everything pertaining to the Days of Ignorance is under my feet completely abolished. Abolished are also the blood-revenges of the Days of Ignorance. The first claim of ours on blood-revenge which I abolish is that of the son of Rabi’a b. al-Harith, who was nursed among the tribe of Sa’d and killed by Hudhail. And the usury of the pre-Islamic period is abolished, and the first of our usury I abolish is that of ‘Abbas b. ‘Abd al-Muttalib, for it is all abolished. Fear Allah concerning women! Verily you have taken them on the security of Allah, and intercourse with them has been made lawful unto you by words of Allah. You too have right over them, and that they should not allow anyone to sit on your bed whom you do not like. But if they do that, you can chastise them but not severely. Their rights upon you are that you should provide them with food and clothing in a fitting manner. I have left among you the Book of Allah, and if you hold fast to it, you would never go astray. And you would be asked about me (on the Day of Resurrection), (now tell me) what would you say? They (the audience) said: We will bear witness that you have conveyed (the message), discharged (the ministry of Prophethood) and given wise (sincere) counsel. He (the narrator) said: He (the Holy Prophet) then raised his forefinger towards the sky and pointing it at the people (said): “O Allah, be witness. O Allah, be witness,” saying it thrice”

[As narrated by Jabir ibn Abd Allah]

http://www.en.wikipedia.org/wiki/Farewell_Sermon

‘Maa ajmalaka’ teri surat, ‘maa ahsanaka’ teri sirat…. ﷺ

http://www.youtube.com/watch?v=WLR3Uc1S8yE

Aap ( ﷺ ) par sub kuch qurbaan…

توہین رسالت مآب صلی اللہ علیہ والہ و سلم کیوں ہو رہی ہے؟
(تحریر آصف محمود )

کبھی آپ نے غور فرمایا یہ توہین رسالت کیوں ہو رہی ہے؟ کیا وجہ ہے کہ بھینسے سانڈ کتے اور بلے مسلسل توہین کے مرتکب ہو رہے ہیں؟
اور کیا وجہ ہے کہ عمائدین حکومت جو نواز شریف کی توہین پر آگ بگولا ہو جاتے ہیں یہاں سکون سے کندھے اچکا کر کہتے ہیں کہ ہمارے پاس ٹیکنالوجی ہی نہیں کہ ان بھینسوں، سانڈوں، کتوں اور بلوں کی بکواس کو بند کر سکیں؟
کبھی آپ نے سوچا کہ ایسا کیوں ہے کہ جب بے بسی کے عالم میں علمائے کرام عدالت سے رجوع کرتے ہیں اور صورت حال دیکھ کر ہائی کورٹ کا جسٹس آرڈر لکھواتے ہوئے رو پڑتا ہے اور کہتا ہے ان سانڈوں کتوں بلوں کو روکنے ورنہ سوشل میڈیا بند کرنا پڑا تو کر دیں گے تو سیکولر اہل دانش جج صاحب کو سینگوں پر لے لیتے ہیں اور ان پر فقرے اچھالنا شروع کر دیے جاتے ہیں؟
میرے نتائج فکر کے مطابق یہ محض اتفاق نہیں بلکہ یہ سیکولر انتہا پسندوں کی ایک فکری واردات ہے. واردات کیا ہے؟…. میں عرض کر دیتا ہوں.
واردات یہ ہے کہ توہین رسالت اس تواتر سے کرو کہ معاشرہ بے بس ہو کر اسے معمول کی ایک کارروائی سمجھ کر خاموش ہو جائے. یہ سیکولرازم کا شارٹ کٹ ہے. جب معاشرہ توہین رسالت پر حساس نہ رہا تو بس کھیل ختم. پھر اس معاشرے میں جو مرضی کرو.
چنانچہ اب یہ گھناونا کھیل شروع ہو چکا ہے. بھینسے کتے بلے سانڈ سب متحرک ہیں. کوئی انہیں روکنے والا نہیں. اسلام آباد جمعیت علمائے اسلام کے بزرگان کے ایک وفد سے برادرم سبوخ سید کے حجرے میں ملاقات ہوئی وہ یہ جاننا چاہتے تھے کہ اس ناپاک مہم کو روکنے کے لیے کیا کچھ کیا جا سکتا تھا.
یہی بزرگ اس معاملے کو لے کر عدالت گئے. جج صاحب بھری عدالت میں رو پڑے. انہوں نے کہا حکومت اس سلسلے کو روک نہیں سکتی تو سوشل میڈیا بند کر دیں گے. اب ان پر یلغار ہو گی. پہلے حکومت آئے گی. کہے گی ہم بے بس ہیں کچھ نہیں کر سکتے. پھر سیکولر اہل دانش سامنے آءیں گے. وہ با جماعت بتائیں گے کہ ہم مسلمان کتنے جاہل ہیں اور ہمیں یہ تک نہیں پتا کہ پاکستان کے پاس ان پیجز کو روکنے کی کوئی ٹیکنالوجی نہیں. جج صاحب کو سینگوں پر لیا جائے گا. کہا جائے گا شوکت عزیز صدیقی تو جماعت اسلامی کے ہیں، یہ تو مولوی ہیں، انہیں تو امام مسجد ہونا چاہیے، یہ تو جدید ٹیکنالوجی سے لاعلم ہیں، یہ تو ہمیں دنیا سے کاٹنا چاہتے ہیں.
بات بہت سیدھی ہے. معاشرے کو فیصلہ کرنا ہے کیا نبی رحمت صلی اللہ علیہ و سلم کی شان اقدس میں توہین ایک معمول کی کارروائی سمجھی جائے یا ان کی شان اقدس کے تحفظ کے لیے آواز اٹھائی جائے؟
مجھے تو فیصلہ کرنے میں ایک لمحہ بھی نہیں سوچنا. میری رائے تو بہت دوٹوک اور بہت واضح ہے. اگر حکومت آ کر کہتی ہے کہ اس کے پاس اس مسئلے کا کوئی حل نہیں اور وہ کتوں سانڈوں اور بھینسوں پر پابندی لگانے کی ٹیکنالوجی سے محروم ہے اور عدالت سوشل میڈیا پر پابندی عائد کر دیتی ہے تو میں اس فیصلے کو خوشدلی سے تسلیم کروں گا. تسلیم ہی نہیں کروں گا تحسین بھی کروں گا….. بلکہ صرف تحسین ہی نہیں کروں گا اس کا مطالبہ بھی کروں گا.
بلاشبہ یہ سوشل میڈیا ایک نعمت ہے. بلاشبہ اس کے بغیر زندگی اذیت ناک ہو گی لیکن اگر اس سوشل میڈیا کی قیمت یہ ہے کہ ہم آقائے دوجہاں صلی اللہ علیہ و آلہ و سلم کی شان میں توہیں برداشت کر لیں تو یہ قیمت ادا نہیں کی جا سکتی. سوشل میڈیا تو کیا سب کچھ آقا پر قربان.

ہمیں اُلفت سِکھا دو نا .. [Re-blogged]

A post that will decorate my blog……

ღ کچھ دل سے ღ

from Kuch Dil Se – کچھ دل سے ღ http://ift.tt/2ec2eJU میری پلکوں پے آنسو ہیں ..
میرے دل میں ندامت ہے ..
نہیں تجھ سے گِلہ کوئی ..
مگر خود سے شکایت ہے ..
نہ پہلے کیوں سمجھ پایا ..
کہ پہلے بھی عنایت تھی ..
رکھا راہ پر, گُمراہ دَھر کر ..
یہ کیسی آزمائش تھی ..

محمد ﷺ کی محبت میں ..
کُل عالم کی نُمائش تھی ..

نبی پردہ, خود باپردہ ..
تیرے جلوے کی خواہش تھی ..
رُخِ انور مدینے میں ..
خُدا کی ہی ستائش تھی ..
کیا خیرہ زمانے کو ..
محمد ﷺ بات کرتے ہیں ..
ہے تھمتا ہر قدم دیکھو ..
میرے آقا ﷺ جو چلتے ہیں ..
جھُکے جاتے ہیں سب کے دل ..
میرے آقا ﷺ جو تَکتے ہیں ..

ہمیں بھی ہو عطا مولا ..
وہ پہلی سانس اُلفت کی ..
ہمیں وہ جام دے دے نا ..
قسم…

View original post 97 more words