Dialogue – 125 (Two liner…)

“Badal gaye ho…!”

“Nahin… Samajh giya hoon….”

Advertisements

Dialogue – 124 (Blog…)

“Aapka blog, blog se ziaada aapki wall lagta hai…”

“.. 🙂 ….Yes…”

“Kiya wajah…?”

“Ye mera blog hai…”

“Tou…!”

“Be what you are…. Become what you want to….

I’m not trying to tell you how to do it
I’m only saying put some thought into it

Be what you are, my friend
And live the life…….”

“… Hmmm…. 🙂 ”

“Aap bhi try keejiye ga… 😀 …”

Dialogue – 123 ( نام و نسل )

  ،  ڈاکٹر جی ڈاکٹر جی

کوئی ایسی دوا دیں کہ اس مرتبہ بیٹا ہی ہو،
دو بیٹیاں پہلے ھیں،
آب تو بیٹا ہی ہونا چاھیئے۔

ڈاکٹر: میڈیکل سائنس میں ایسی کوئی دوائی نہیں ہے۔

ساس: پھر کسی اور ڈاکٹر کا بتا دیں؟

ڈاکٹر: آپ نے شاید بات غور سے نہیں سنی،
میں نے یہ نہیں کہا کہ مجھے دوائی کا نام نہیں آتا۔ میں نے یہ کہا کہ میڈیکل سائنس میں ایسی کوئی دوائی نہیں ہے۔

سسر: وہ فلاں لیڈی ڈاکٹر تو۔۔۔

ڈاکٹر: وہ جعلی ڈاکٹر ہوگا ہے،
اس طرح کے دعوے جعلی مولینا، حکیم، پیر وغیرہ کرتے ہیں، سب فراڈ ہے یہ۔۔

شوہر: مطلب ہماری نسل پھر نہیں چلے گی؟

ڈاکٹر : یہ نسل چلنا کیا ہوتا ہے؟ آپ کے جینز کا اگلی نسل میں ٹرانسفر ہونا ہی نسل چلنا ہے نا؟ تو یہ کام تو آپ کی بیٹیاں بھی کر دیں گی،
بیٹا کیوں ضروری ہے؟
ویسے آپ بھی عام انسان ہیں۔ آپ کی نسل میں ایسی کیا بات ہے جو بیٹے کے تھرو ہی لازمی چلنی چاھیئے؟

سسر: میں سمجھا نہیں؟

ڈاکٹر: ساھیوال کی گایوں کی ایک مخصوص نسل ہے جو دودھ زیادہ دیتی ہے۔ بالفرض اس نسل کی ایک گائے بچ جاتی ہے تو worried ہونا چاھیئے کہ اس سے آگے نسل نہ چلی،
تو زیادہ دودھ دینے والی گایوں کا خاتمہ ہو جائے گا۔ طوطوں کی ایک مخصوص قسم باتیں کرتی ہے۔ بالفرض اس نسل کی ایک طوطی بچ جاتی ہے تو فکر ہونی چاھیئے کہ اگر یہ بھی مر گئ کہ تو اس نسل کا خاتمہ ہو جائے گا۔
آپ لوگ عام انسان ہیں باقی چھ سات ارب کی طرح  آخر آپ لوگوں میں ایسی کونسی خاص بات ہے؟

سسر: ڈاکٹرصاحب کوئی نام لینے والا بھی تو ہونا چاھیئے۔

ڈاکٹر : آپ کے پَر دادے کا کیا کیا نام ہے؟

سسر: وہ، میں، ہممممم، ہوں وہ۔۔۔۔

ڈاکٹر: مجھے پتہ ہے آپ کو نام نہیں آتا،
آپ کے پر دادا کو بھی یہ ٹینشن ہو گی کہ میرا نام کون لے گا؟ اور آج اُس کی اولاد کو اُس کا نام پتہ بھی نہیں۔
بہادر شاہ ظفر کی سگی اولاد آج دلی کے چاندنی چوک میں رہ رہی ہے۔ فقیروں سے ایک درجہ اوپر حالت ہے اُن کی۔ سب کو بتاتے پھرتے ہیں کہ ہم ہیں مغلیہ سلطنت کے اصل وارث لیکن لوگوں کو چھنکنا پرواہ نہیں۔
ویسے آپ کے مرنے کے بعد آپ کا نام کوئی لے یا نہ لے۔ آپ کو کیا فرق پڑے گا؟ آپ کا نام لینے سے قبر میں پڑی آپ کی ھڈیوں کو کونسا سرور آئے گا؟
علامہ اقبال کو گزرے کافی عرصہ ہوگیا،
آج بھی نصاب میں انکا ذکر پڑھایا جاتا ہے۔
گنگا رام کو مرے ہوئے کافی سال ہو گئے لیکن لوگ آج بھی گنگا رام کو نہیں بھولے۔
ایدھی صاحب مر گئے،
لیکن نام ابھی بھی زندہ ہے اور رہے گا۔
جنید جمشید کو کون نہیں جانتا ؟

بہو: پر ڈاکٹر جی وہ بڑھاپے میں ہماری خدمت و کیئر کون کرے گا؟

ڈاکٹر: تو سیدھی طرح کہیں نا کہ آپ کو بڑھاپے میں بیٹے کے روپ میں ایک خدمتگار و سیوا کرنے والے کی ضرورت ہے۔ ایک بچہ پیدا کر کے آپ investment کرنا چاھتی ہیں کہ بڑھاپے میں آپ کو فائدہ ہو؟

بہو: ہمارے معاشرے میں تو ایسا ہی ہوتا ہے۔

ڈاکٹر: آپنی آپنی سوچ ہے۔ میں تو جب تک زندہ ہوں۔اس طرح زندگی گزاروں گا کہ مجھے بڑھاپے میں کسی کی بھی محتاجی و ضرورت نہ ہو۔ میری غیرت یہ گوارا نہیں کرتی کہ میرا پالا ہوا بعد میں مجھے پالے یا سنبھالتا پھرے،
بہرحال یہ لمبا ٹاپک ہے اور آخری بات۔۔۔۔۔۔

رسول اللہﷺ کی ایک ہی بیٹی (رضی اللہ تعالی عنھا) سے نسل چلی تھی اور آج آپ کو ہزاروں لاکھوں لوگ رسول اللہﷺ کی اولاد (سید) ہونے کا دعوی کرتے نظر آتے ہیں۔۔۔۔!!

[Received in a Whatsapp Chat]

Dialogue – 122 (Aakhri Sahaara…)

“Kiya bana…. Issue resolve hua..?”

“Nahin….”

“Ahan… Koshish jaari rakho…”

“Koshish to bohat kar li… Ab to sirf dua ka sahaasa hai..””

“… 🙂 … Aisay nahin hota…”

“Kiya aisay nahin hota….. Dua nahin kiyya kartay kiya..!?..”

“Kartay hein…
Pur sahee tarteeb kuch aur aur hai…”

“Aur wo kiya hai….?”

“Dua kabhi bhi aakhri sahaasra nahin hota…. Dua to sub say pehlay ki jaati hai….. Uskay baad, dua ki simt mein mehnat ki jaati hai….bharpoor, consistent mehnat……na ruknay, jhuknay waali mehnat……sabr waali, istaqaamat waali mehnat….”

“Pur tarteeb se kiya hota hai…..? …. Baat to ingredients ki hai….. Aakhri sahaara to dua hi hua karti hai….”

“Tarteeb se hi to farq parrta hai…. Dua pehla step hua karti hai… Farq jaan’nay kay liye 2 misaalein paish hein:

  • Ghazwa-e-badr….. Pehlay dua ki gayi, phir strategy aur tactics…
  • Fall of Baghdad, by Halaku Khan…. Dua aakhir mein ki gayyi…. Even usay, uskay mooun pe bad-duaaein di gayeein…. Pur aisi bad-duaaein kahaan kisi ka kuch bigaarrti hein…..”

Dialogue – 121 (Direction)

“Cheezein kyoon late samajh aati hein….. Time pe kyoon nahin aatein…!?”

“Pouda jub barra hota hai, tub hi phal deta hai… Har cheez ka aik waqt muqarrar hai…. Hum ne dekha hai, kay even nabuwwat bhi 40 years mein mili Allah kay Mehboob
(SAAW) ko..”

“Hmmmmm…..”

“Haan, ye alag baat hai kay pouday kay barray honay tak ka time important hai… Uski nourishment, grooming……sub se barrh kay: direction…”

“Direction?…. Wo to sub poudon ki aik hi hoti hai… Seedhi..”

“.. 🙂 … Jin poudon ko aap nourish kartay hein, unki direction seedhi rakhi jaati hai… Trim kiyya jaata hai unhein… Review kiyya jaata hai… Constantly……
Jub tak pouda barra nahin ho jaata….”

“Bilkul jaisay hamaaray Parents hamein nazar mein rakhtay hein…. Point out kartay rehtay hein…. Bataatay, jataatay rehtay hein….”

“Yes… Unhi cheezon ki wajah se hai kay hum seedhay raastay per rehtay hein… Warna feedback-control system kay baghair to toy car bhi seedhi nahin chalti…”

Dialogue – 120 (Hard-work / Smart-work….)

“Hard work is better….? Or Smart work…?”

“Sincere work…”

“Ahan…”

“…… Because we have been told by Rasullullah ﷺ that, Actions are but by intention and every man shall have but that which he intended….

The hard work or smart work or whatever work strategy is about the management of work… Everyone has his / her way, skills, attitude and experience of doing work…. What differentiates the results is the amount of sincerity (ikhlaas), excellence (ehsaan), consistency of action and constancy of purpose….”

 

Dialogue – 119 (Untitled)

“Dialogues khatam ho gaye…!?”

“Nahin to…”

“Phir!? Ab to kabhi kabhaar hi milta hai parrhnay ko…”

“Wo actually, dialogue wala chala giya…”

“Kiya matlab!?”

“Ab wo dialogues hotay hi nahin….. jub hua kartay thay, to mein unhi nok palak sanwaar kay paish kar deta thaa…”

“To kiya tum dialogue likhta nahin kartay thay..!!?”

“Dialogues likhay nahin jaatay….. Bolay jaatay hein….”