الفاظ کے پیچوں میں اْلجھتے نہیں دانا۔۔۔

image (1)

والتین

پہاڑوں کی طرح ساکِت

درختوں  کی طرح  جامِد

کھڑے ہیں  پا  بہ گِل لیکن

ہمیں اپنی قسم ہم نے

اْسے اب تک نہیں ڈھونڈا

لہو سے  تر بہ تر  اِس خاک کے پیکر سے کوئی  ماورا  شے ہے

خْدائے بے بدن جِس کو

درختوں اور پہاڑوں کی قسم کھا کر

کمالِ احسنِ تقویم کہتا ہے

 

{Syed Mubarik Shah]

“Love is the ultimate expression of the will to live….”

محبت عَبد میں  مَعبود کا حصہ

محبت غیب میں مشہود کا قصہ

محبت ذات کے  اظہار کی خواہش

محبت اَندروں کو ایک ہی رستہ

محبت رابطۂ  سانس  کا فِدیہ

محبت جلوۂ جانان کا صدقہ

صنم سازی کی دُنیا میں

محبت قُربتِ رحمٰن کا  رُتبہ

مزارِ جاں پہ سَر نِگوں جلتا

چراغِ حسرتِ ایّام کا  شعلہ

 کہ  بامِ وقت پہ ٹھہرے

محبت لمحۂ موجود کا قصہ

محبت عاشقانِ راز کی گھاتیں

محبت واقفانِ حال کی راتیں

تلاشِ اصل میں بکھرے

اُس دلِ  برباد  کی باتیں

مگر جو  روح مقیّد ہو

مگر جو سانس گُھٹ جائے

بھلے اظہار بِکھرا ہو

بھلے  دُنیا وہ رنگیں ہو

میسّر پھر تکّدر  ہے

تڑپ پھر تو مقدر ہے

سِوا قیدِ زَماں سے ہو

پرے جو انتہا سے ہو

وہی جذبہ مسلسل ہے

وہی تاباں  محبت ہے

اِمتنان قاضی

ہوا کے دوش پہ رکھے ہوئے چراغ ہیں ہم۔۔۔

http://www.dawnnews.tv/news/1060326/

وْہی حسیں ہے حقیقت زوال ہے جِس کی۔۔۔

ہم شوقِ جنوں کے سَودائی

By Imtnan Qazi 

 

ہم شوقِ جنوں کے سَودائی
ہم غرض و جفا کے ہرجائی
اِک ردِّ انا ملحوظ ہمیں
ہو محفل یا کہ تنہائی
ہم کاسہ گرانِ نفرت بھی
ہے پیش جہانِ اُلفت بھی
دائم ہے ہم سے منزل بھی
ہم راہ روانِ ہجرت بھی
ہم رنج و الم کے سوداگر
ہم رُوح و فکر کے بخیہ گر
ہم پیشہ ورانِ حسرت بھی
ہم بیچیں خواب کی ہر صورت
راہوں کا فسُوں بھی ہم سے ہے
منزل کا سکُوں بھی ہم سے ہے
ہم ہی سے تعلق پھاہوں کا
زخموں کا درُوں بھی ہم سے ہے
ہم بیم و رجا کے پُتلی گر
ہم رنگ و وفا کے جادوگر
ہر خوف کی چادر ہم سے ہے
ہر ہوّا ہم… ہم بازی گر!!
تم جانو تمری راہ ہو کیا
ہے ہم کو کانچ کا چُننا بس
جانو جو ادنیٰ جان سکو
ہے ہم کو چھان سا چَھننا بس
ہم اہلِ قلم کی دنیا بھی
احساس کا جاری جھرنا بس
یوں ہمری یہ پہچان کرو
ہے ہم کو حال کا لکھنا بس!!

 

http://www.imtnaniyat.wordpress.com

Expressions – 4

تائیدِ ستم مصلحتِ مفتئ دیں ہے

اب صدیوں کے اِقرار ِ اطاعت کو بدلنے

لازم ہے کہ اِنکار کا فرماں کوئی اْترے۔۔

(فیض)