Beautiful Pakistan – Skardu Valley

IMG-20171213-WA0006.jpg

Advertisements

Words Unsaid – 25

یہ رہی آنکھ یہ دل دیکھ ترا مسکن ہے
اب کوئی اور شہادت نہیں دینی میں نے

Beautiful Pakistan – Dirlai Lake (Near Deosai)

IMG-20171209-WA0006.jpg

وُہ جو ماتھے پہ لگا تھا وُہی پتھر گُم ہے [A blog-post revisited….]

Photographs of Khurram, Muniba and Nael have deliberately been removed from this post.

 

It was an evening in July 2014, when I ran into Nael and his Daddy as they were playing football beside their home in Mashhood Complex. Both didn’t reveal an iota of woe despite the devastating life-changer. The kid wore cutest of sweety smiles… 🙂

Well, Allah has His Plans, life has its spirals and man has his imperfections..  Hence, naseeb and adab are so closely knit and are in-lieu of each other more than anything else in this universe. And, khushi is more of an inner radiance than an inbound agitation.

Even after all that has happened, the resilient family has become an example of perseverance, determination and aspiration….. Time has cost Muniba Ishfaq a part of her brawn and Khurram Shahzad, a part of his spirits; however, what could not be snatched away is their holding on …

Allah has Promised not to put us through something that we can’t handle (Al Baqarah : 286)… He Shall inshaAllah Bless you both with aasaani.

You are light-houses for sinking souls. May you be among those who matter to the world and not to whom the world matters. Aameen.

….And best wishes for the kiddo. May he inshaAllah be the icon of courage, patience and wisdom when he grows big. After all, “men are what their mothers make them”.

God Bless you, today and always…

 

 

Whats happening now, is certainly not good.

Allah rehm farmaayein.

Words Unsaid – 24

تیرے خیال کی خوشبو بسی ہے چاروں طرف

 … عجیب وادیء شاداب میں ہوں کچھ دِن سے

Words Unsaid – 23

تعریف کِویں کریئے، کہ مثال نئیں لبھدی

اَسی جو وِی کہندے آں، توہین جیا لگدا۔۔۔۔

سفرِ آخرِ شب

بہت قریب سے آئی ہوائے دامنِ گُل
کِسی کے رُوئے بہاریں نے حالِ دل پُوچھا
کہ اَے فراق کی راتیں گُزارنے والو
خُمارِ آخرِ شب کا مزاج کیسا تھا
تمھارے ساتھ رہے کون کون سے تارے
سیاہ رات میں کِس کِس نے تم کو چُھوڑ دیا
بِچھڑ گئے کہ دغا دے گئے شریکِ سفر ؟
اُلجھ گیا کہ وفا کا طِلسم ٹُوٹ گیا؟
نصیب ہو گیا کِس کِس کو قُربِ سُلطانی
مِزاج کِس کا یہاں تک قلندرانہ رہا
فِگار ہو گئے کانٹوں سے پیرہن کِتنے
زمیں کو رشکِ چمن کر گیا لہُو کِس کا
سُنائیں یا نہ سُنائیں حکایتِ شبِ غم
کہ حرف حرف صحیفہ ہے ، اشک اشک قلَم
کِن آنسوؤں سے بتائیں کہ حال کیسا ہے
بس اِس قدر ہے کہ جیسے ہیں سرفراز ہیں ہم
ستیزہ کار رہے ہیں ، جہاں بھی اُلجھے ہیں
شعارِ راہ زناں سے مُسافروں کے قدم
ہزار دشت پڑے ، لاکھ آفتاب اُبھرے
جبیں پہ گرد ، پلک پر نمی نہیں آئی
کہاں کہاں نہ لُٹا کارواں فقِیروں کا
متاعِ درد میں کوئی کمی نہیں آئی

 

 

In memory of my father…. May Allah Bless his soul. Aameen.