صبر کِیا ہے، شُکر کِیا ہے، راضی ہو کر دیکھ لیا ہے ۔۔ لیکن دِل کو چین آ جائے، ایسا تھوڑی ہو سکتا ہے

http://www.humsub.com.pk/143354/muhammad-hassan-miraj-5/

 

Dear Umar Chaudhry, Falconite….!

We know you’d rest in peace…

What we don’t know is, why is it so tough, unfortunate and sad to hear that…

Advertisements

مٹّی کی محبت میں ہم آشفتہ سروں نے … وہ قرض اتارے ہیں کہ واجب بھی نہیں تھے

A tribute to worthy people, whose lives and days and nights are miserable…….. just to make ours, brighter and safer…

 

http://www.humsub.com.pk/119027/sidra-dar-43/

گُریز کرتی ہوا کی لہروں پہ ہاتھ رکھنا ، میں خوشبوؤں میں تُمہیں مِلوں گا

IMG-20180304-WA0022.jpg

Usman Bin Safdar – 1362 Sabre

 

Squadron Leader Usman bin Safdar (Instructor pilot) of PFT Wing PAF Academy Risalpur and Aviation Cadet Zohaib (student pilot) embraced shaadat on 5 March 2009 when their Mushshak aircraft crashed near Dhoke Pathan Bridge (District Tala Gang) while on a routine training mission.

 

پُکارتی ہے زمینِ سرحد

عظیم ہے گو وفا کی منزل

عظیم تر ہیں وہ پاؤں جِن کو

… صدا وطن کی ہمارے دامن میں لے کے آئی

عظیم تر ہے وہ سبز خواہِش

…. جو شوق رِشتوں کی اُستواری کی سُرخ مٹّی سے پھُوٹتی ہے

عظیم تر ہے وہ سانس جِس کی عزیز ڈوری

…. وطن کے رستے میں ٹوٹتی ہے

 

Shuhada of 24th Entry

دِل کے آئینے میں ہے تصویرِ یار

16998733_1492014464156210_8969849898635563418_n.jpg

عشقَ تے باہِ بروبر، عشقَ دا تا تکھیرا ۔
باہِ سڑیندی ککھّ کانے نوں، عشقَ سڑیندا جیئڑا ۔
باہر سامے نال پانی دے،عشقَ دا دارو کہڑا ۔
یار میڈے تھے چاہِ نہ رکھیں، جتھے عشقَ لائندا ڈیرہ ۔

یار ڈاڈھی عشقَ آتش لائی ہے ۔

دھن بھاگ نیں اونہا ں ماواں دے ۔ ۔ ۔۔ جِنہاں ماواں دے ایہ جائے نیں ۔ ۔ دھن بھاگ نیں بھین بھراواں دے ۔ ۔ ۔ ۔ جِنہاں گودیا ں وِیر کھڈائے نیں

http://www.youtube.com/watch?v=WvwpC5RlNdI

However, there’s a criteria to everything….. There’s a definition to everything….. There’s a rationale to everything…….and…..there’s a limit to everything..

Lt Moeed and Sep Basharat are the latest names in the Shahaadat list.

Some weeks back, when I visited old Maj Ishaq (R) to condole about his valiant son, he appeared as cool, composed and carefree; as the old, women and children seem.

(Sadly, they are supposed not to be…..! Actually, they are never….)

سچ ہی کہتے

بچّوں ، بوڑھوں ، عورتوں کو کب فکر ہے جنگ کی

وہ تو سب کے سانجھے ھوتے

وہ تو سب کے اپنے ہوتے

بچّے سب کے پیارے ہوتے

بوڑھے سب کے وڈیرے ہوتے

مائیں سب کی چھاؤں ہوتیں

“……سرحد پر ہر بار چلی جب گولی”

اِن رِشتوں کا

اِن خوابوں کا

اِن ناطوں کا خون ہوا تھا

 

(Last lines of a poem – written for a friend who is sweet….for a cause that is worthy….on a note that is sacred…..with a feeling that may never find words to be described….)

Yes, my dear Wisi Baba! As we were discussing the rationale of things the other day….. Yes, the price that someone bears in the form of losing a dear one is the actual cost of war…. Such is the irony of life, that the understanding of meanings is always related to losing something, someone…….naam, cheez, jagah….

Hence, the value of these sons of soil is best known by their dear ones…….so are the meanings of words like nation, cause, shahaadat, war, freedom, etc…

Two days from now, there will be anniversary of dozens of rose-buds who never got to bloom…….all in the name of God….all by the people of God….

اِس وطن کے پرچم کو ….. سربُلند ہی رکھنا

IMG-20171108-WA0006.jpg

 

Picture of Son of Lt Col Shahid Shaheed

… وہ جُنوں جو آب و آتش کو اسیر کر چکا تھا

wc1757567.jpg

سُرخرو دھوپ میں خورشید بکف آج کا دِن

ہر برس موسمِ خوشبو کی گِرہ کھولتا ہے

گونج اُٹھتا ہے دِل و جاں میں دُعاؤں کا سکوت

قتل گاہوں میں شہیدوں کا لہو بولتا ہے

ذرّے ذرّے میں اُترتا ہے شعاؤں کا جلوس

ریزہ ریزہ میرے جزبوں کے گُہر تولتا ہے

گردشِ وقت کی محراب کے سائے میں حیات

اپنے اعداء سے اُلجھنے کا ہُنر مانگتی ہے

سانس کی نوکِ سِناں اپنی مُحبت کے عوض

قامتِ دار سے اونچا کوئ سر مانگتی ہے

قطرہء خونِ جگر ، دشت سے گُلزار طلب

کوئے جاناں میں صبا رقصِ شرر مانگتی ہے

فدیہء جاں کے لئے آبلہ پائی کی ہوِس

شوقِ منزل سے زرِ گردِ سفر مانگتی ہے

سرفروشی کی روایت صفِ دِلداراں سے

زندہ رہنے کی دُعاؤں کا اثر مانگتی ہے

دیکھئیے کون ٹھہرتا ہے سزا وارِ جنوں

بارشِ سنگ سرِ آئینہ گر مانگتی ہے

آج کے دِن کی تمازت میرے شاہینوں سے

شوقِ پرواز و فلک بخت نظر مانگتی ہے

آج کا دِن میرے بے باک دلیروں کا سفیر

جِن کی ہیبت صفِ اعداء کے لئے برقِ تپاں

جن کے نعروں کی دھمک موت کے حربوں پہ مُحیط

جن کی سج دھج پہ شب و روز کے تیور نازاں

جن کے تقدیر کے ماتھے پہ رقم فتحِ مُبیں

جن کی تکبیر مچلتے ہوئے جذبوں کی اذان

آج کے دن میرے بے خوف ، جگر دار جری

لشکرِ ظُلم کی ہر چال سے ٹکرائے تھے

سرحدِ ارضِ وطن تیری حفاظت کے لئے

کتنے خورشید تیری خاک کے کام آئے تھے

سرحدِ ارضِ وطن، تُجھ پہ نثار اپنی حیات

جذبہء شوق تیرے حُسنِ سر افراز کے نام

صف بہ صف لشکرِ اسلام ، تیرا حُسن بخیر

مرحبا لوحِ شہادت پہ تیرا نقشِ دوام

دستہء دِل زدگاں تیری کمندوں کو دعا

سینہ ء وقت میں روشن تیرے قدموں کا قیام

سرحدِ پاک سلامت رہے تُو حشر تلک

پرچمِ ارضِ وطن تیری بلندی کو سلام

(by Mohsin Naqvi)